بی ایم سی انتظامیہ کی نااہلی‘ تین سالہ بچہ گٹر میں گر کر جاں بحق ہوگیا ایم ایس کو معطل کیا جائے‘ اعلیٰ حکام نوٹس لیکر مجھے انصاف فراہم کیا جائے‘محبوب علی ہزارہ کا پریس کانفرنس

کوئٹہ(ثبوت نیوز)ہزارہ ٹاون کے رہائشی محبوب علی ہزارہ نے کہا ہے کہ گزشتہ روز بی ایم سی انتظامیہ کی نااہلی اور غفلت کی وجہ سے میراتین سالہ بچہ گٹر میں گر کر جاں بحق ہوگیا اعلیٰ حکام نوٹس لیکر مجھے انصاف فراہم کیا جائے

یہ بات انہوں نے کوئٹہ پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہی‘ انہوں نے کہاکہ گزشتہ روز میں اپنی اہلیہ اور بچے کے ساتھ علاج کیلئے بی ایم سی ہسپتال آئے تھے صبح گیارہ بجے جب میں پرچے لینے کیلئے گیا

واپسی پر میرا تین سالہ بچہ اشقان علی غائب تھا جس پر میں نے انتظامیہ سے رابطہ کیا لیکن بی ایم سی ہسپتال کے انتظامیہ نے تعاون کرنے کی بجائے ٹال مٹول سے کام لیا اور ہم ادھر ادھر بھاگتے رہے رات کو خود معلوم کیا

کہ میرا بچہ جو بی ایم سی کھلے عام گٹر تھا اس میں گر کر جاں بحق ہوگیا تھا انہوں نے کہاکہ اس سے قبل جب ہم نے متعلقہ انتظامیہ سے فوٹیج طلب کیا تو فوٹیج بھی دینے سے انکاری تھے جب ہم نے متعلقہ تھانہ میں ایف آئی آر درج کیا

تو بعد میں بی ایم سی ہسپتال کی انتظامیہ نے فوٹیج فراہم کیا جس سے واضح معلوم ہورہا ہے کہ بی ایم سی میں کھلے عام گٹر ہے جو بچے کے ساتھ بڑ ے لو گ بھی گر سکتے ہیں انہوں نے کہاکہ اس واقعہ کے خلاف متعلقہ حکام نوٹس لیکر ہمیں انصاف فراہم کیا جائے

جبکہ بی ایم سی ہسپتال کے ایم ایس کو برطرف کرکے ان کے خلاف انکوائر ی کی جائے۔یاد رہے کہ گزشتہ روزکوئٹہ کے سب سے بڑے اسپتال بولان میڈیکل کمپلیکس میں افسوسناک واقعہ پیش آیا جہاں تین سال کا بچہ کھلے مین ہول میں گر کر جاں بحق ہوگیا

گزشتہ روز تین سال کا بچہ اپنی مریضہ ماں کے ساتھ آیا اور لاپتا ہو گیا جس پر والدین نے تھانے میں رپورٹ درج کرائی جس کے بعد تحقیقات شروع ہوئیں۔اسپتال کی سی سی ٹی وی ویڈیو سے پتا چلا کہ بچہ مین ہول میں گر کر جاں بحق ہوگیا ہے۔کچھ عرصہ قبل اسی اسپتال میں آوارہ کتوں کے گھسنے کی ویڈیو بھی سامنے آئی تھی لیکن واقعے کی تحقیقاتی رپورٹ ابھی تک سامنے نہیں آسکی۔